ذہنی ٹینشن کی وجہ سے عورت میں حمل نہ ٹھہر نا!

آج ہم بات کر یں گے ٹینشن اور پر یگنینسی کے بارے میں تو جو اکثر عورتیں ہوتی ہیں ان کی شادی کو تین یا چار سال کا عرصہ گزر چکا ہوتا ہے ان کے ہاں ابھی تک اللہ پاک نے کرم نہیں کیا ہوتا وہ بے اولاد ہوتی ہیں ان کے ہاں کسی بھی قسم کی کوئی بھی اولاد نہیں ہو تی۔ اور وہ اس کی بہت ہی زیادہ ٹینشن لیتی ہیں اور اس کی جو مین وجہ ہوتی ہے وہ معاشرہ ہو تا ہے وہ ان کو بہت ہی زیادہ تنگ کر تا ہے میں آپ کو بتاؤں گا کہ اگر آپ ٹینشن لیں گی تو آپ کے اوپر کچھ بھی اچھا نہیں ہوگا

آپ کی پریشانی دن با دن بڑھتی جا ئیں گی آپ کا جو حمل ہے وہ بھی مشکل ہو جا ئے گا تو میری باتوں کا آغاز کرنے سے پہلے میں یہاں ایک بات کر نا چاہوں گا کہ میری ان باتوں کو بہت ہی زیادہ غور سے سنیے گا تا کہ میری ان باتوں کی سمجھ آپ کو بہت ہی اچھے سےآ سکے

اور آپ ان معلوماتی باتوں پر ٹھیک سے عمل کر سکیں۔ میں آپ کو بتا تا چلوں کہ لوگوں کا کام ہے باتیں کر نا وہ تما م لوگ جن کی شادی کو دو دو سال گزر جا تے ہیں اور ان کے ہاں خوش خبری ہی نہیں ہوتی تو جو اردگرد کے لوگ ہوتے ہیں وہ ان سے پوچھ پوچھ کر ان کی جو جان ہوتی ہے

ان کی زندگی کو ع زاب بنا دیتے ہیں یہ جو لوگ ہیں یہ جو آپ پر انتہائی معذرت کے ساتھ کہنا چاہوں گا کہ لوگوں کا کام صرف باتیں کر نا ہے آپ ان کی باتوں پر دھیان نہ دیا کر یں بس اللہ سے اچھے کی امید رکھا کر یں اللہ ہی سب کو اولاد کی نعمت سے نواز نے والا ہے اور اللہ ہی وہ ذات ہے جس نے آج تک آدم ؑ سے لے کر جتنے بھی انسان ہیں ان کو اولاد ِ نرینہ بخشی ہے تو ہمیں ہر حال میں اللہ کا شکر ادا کر نا چا ہیے اور اپنے صرف ایک ہی اللہ سے مانگنا چاہیے کیونکہ وہی ہی ذات ہے جو عطا کر نے والی ہے۔

لوگوں کی باتوں پر جا ئیں گے تو آپ مزید ٹینشن لیں گے جتنی زیادہ ٹینشن لیں گے اتنے زیادہ آپ کے لیے حمل کے مسئلے مسائل پیدا ہوں گے۔ یہ جو دوائیاں ہوتی ہیں یہ بھی اللہ پاک کی طرف سے ہی ہوتی ہیں یہ بھی کسی نہ کسی بیماری کے لیے استعمال ہوتی ہیں۔ دوائی کے استعمال سے جو آپ کی رپورٹ ہے وہ مثبت بھی آسکتی ہے

اور آپ کو اللہ پاک خو ش خبری بھی دے سکتے ہیں اور آپ کو اولادِ نرینہ سے بھی نواز سکتے ہیں۔ تو ہمارے پاس ایسی د وائیاں موجود ہیں جو کہ حمل ٹھہرنے میں آپ کی مدد کر سکتی ہیں تو آپ ان دوائیوں کے استعمال سے اولاد کی نعمت سے بہرہمند ہو سکتے ہیں۔

کیٹاگری میں : health

اپنا تبصرہ بھیجیں